Sufinama

دو جہاں جلوۂ جاناں کے سوا کچھ بھی نہیں

ذہین شاہ تاجی

دو جہاں جلوۂ جاناں کے سوا کچھ بھی نہیں

ذہین شاہ تاجی

MORE BYذہین شاہ تاجی

    دو جہاں جلوۂ جاناں کے سوا کچھ بھی نہیں

    ہم نے کچھ اور نہ دیکھا تو خطا کچھ بھی نہیں

    کچھ نہ ہونے کے سوا دار فنا کچھ بھی نہیں

    ہے اگر کچھ تو یہاں غیر خدا کچھ بھی نہیں

    عشق ہر آن نئی شان نظر رکھتا ہے

    غمزہ و عشوہ وانداز و ادا کچھ بھی نہیں

    زندگی سیل مسلسل ہے رواں اور دواں

    موج و گرداب و تلاطم کی خطا کچھ بھی نہیں

    متفق عشق سے اس بات میں ہے عقل ذھینؔ

    درد ہاتھ آئے تو سب کچھ ہے دوا کچھ بھی نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : آیات جمال (Pg. 107)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY